Press Release

Children categories

مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کا راحتی وفد زلزلہ متاثرین کی راحت رسانی کے لیے روانہ

مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کا راحتی وفد زلزلہ متاثرین کی راحت رسانی کے لیے روانہ (80)

مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کے ناظم عمومی مولانا اصغرعلی امام مہدی سلفی نے اخبار کے نام جاری ایک بیان میں کہا ہے کہ وطن عزیز اور پڑوسی ملک نیپال میں آئے تباہ کن زلزلے سے متاثرین کی راحت رسانی کے لیے مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کا ایک راحتی وفد آج متاثرہ مقامات کے لیے روانہ ہوا۔ جووہاں پہنچ کر متاثرین کے مابین ریلیف و راحتی اشیاءتقسیم کرے گا اور وہاں کی صحیح صورت حال کا جائزہ لے کر مرکز کو آگاہ کر ے گا تاکہ متاثرین کی باز آباد کاری کے لیے مرکز سے ہر ممکن تعاون ارسال کیا جاسکے۔

پریس ریلیز کے مطابق مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کے اس راحتی وفد کی سربراہی مولانا محمد علی مدنی ناظم صوبائی جمعیت اہل حدیث بہار کررہے ہیں اور اس وفد میں مولانا محمد ہاشم سلفی اور مولانا کلیم اللہ انصاری سلفی وغیرہ شریک ہیں۔

ناظم عمومی نے اپنے بیان میں عوام وخواص سے اپیل کی ہے کہ مصیبت کی اس گھڑی میں وطن عزیز اور پڑوسی ملک کے زلزلہ متاثرین کی راحت رسانی اور باز آباد کاری کے لیے اپنا بھر پور تعاون پیش کریں۔

واضح ہو کہ مورخہ ۵۲/ اپریل کو پڑوسی ملک نیپال میں ایک بڑا زلزلہ آیا تھا جس سے بہا ، یوپی اور مغربی بنگال وغیرہ صوبوں کے متعدد علاقے بھی متاثر ہوئے ہیں۔ مذکورہ وفد ان تمام علاقوں کا دورہ کرے گا۔

جاری کردہ

مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند

View items...

مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کی اس عظیم ملی ، دینی وادبی شخصیت کے انتقال پر تعزیت
دہلی:۶جولائی۴۱۰۲ء
مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کے ناظم عمومی مولانا اصغرعلی امام مہدی سلفی نے اخبار کے نام جاری ایک بیان میں خواجہ قطب الدین مونس رکن عاملہ وشوریٰ مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کے انتقال پر غم وافسوس کا اظہار کیاہے اور آپ نے فرمایا کہ پوری جماعت خصوصا تمام اراکین و متعلقین جمعیت انتہائی سوگوار ہیں ۔ اور اسے جماعت و ملت کا عظیم خسارہ قرار دیا ہے ۔
پریس ریلیز کے مطابق خواجہ قطب الدین مونس ۵ـ۶ تاریخ کے درمیانی شب میں تقریبا بارہ بجے ایک طویل علالت کے بعد اللہ کو پیارے ہوگئی۔ انا للہ وانا الیہ راجعون۔ موصوف صوم و صلاۃ کے سخت پابند تھے ۔ دینی و ملی کاموں میں پیش پیش رہا کرتے تھے ۔ مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کے بڑے فعال رکن تھی۔ آپ ہمہ وقت جمعیت و جماعت کی ترقی کے لیے کوشاں رہتے تھے اور اس کی بے لوث خدمات انجام دیتے تھے ۔جمعیت اہل حدیث ایک عظیم و مخلص رکن سے محروم ہوگئی ہے اور اس عظیم عمارت کا ایک اہم ستون گرگیا ہی۔

دہلی۸۲جون۴۱۰۲ء

مرکزی اہل حدیث رویت ہلال کمیٹی دہلی سے جاری اخباری بیان کے مطابق آج مورخہ ۲۸جولائی۲۰۱۴ء بمطابق ۲۹شعبان ۵۳۴۱ھ بروز سنیچر مرکزی اہل حدیث رویت ہلال کمیٹی کی ایک میٹنگ ہوئی اور ملک کے کسی بھی حصے میں چاند کی رویت کی مصدقہ و مستند خبر موصول نہ ہونے کے پیش نظر مرکزی اہل حدیث رویت ہلال کمیٹی نے یہ فیصلہ کیا ہے کہ ان شاء اللہ ۳۰جون ۴۱۰۲ ء بروز پیر رمضان کی پہلی تاریخ ہوگی۔

 جاری کردہ

مرکزی اہل حدیث رویت ہلال کمیٹی

دہلی : ۶/ جون ۴۱۰۲ء
مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کے ناظم عمومی مولانا اصغر علی امام مہدی سلفی نے اخبار کے نام جاری ا یک بیان میں گزشتہ روز پونہ میں شرپسند عناصر کے ہاتھوں مسلم انجینئر کے قتل اور فرقہ وارانہ کشیدگی میں اضافہ پر تشویش کا اظہار کیا ہے اور صوبائی و مرکزی حکومتوں سے مطالبہ کیا ہے کہ ملزمین کی شناخت کر کے قرار واقعی سزاد ی۔
نیز انہوں نے کہا ہے کہ بعض شرپسند عناصر اپنے غیر ذمہ دارانہ ، بزدلانہ اور مجرمانہ حرکتوں کے ذریعہ ملک میں فرقہ وارانہ ہم آہنگی کی فضا کو سبوتاز کرنا چاہتے ہیں۔ حکومتوں کو ان عناصر سے نمٹنے کے لیے سنجیدگی سے اقدامات کرنا چاہئی۔
انہوں نے عوام سے اپیل کی ہے کہ وہ شرپسند عناصر کی حوصلہ شکنی کرتے ہوئے اپنے قول وعمل سے قومی یکجہتی اور فرقہ وارانہ ہم آہنگی کا مظاہرہ کریں۔ یہی ملک و ملت کے مفاد میں ہی۔
ناظم عمومی نے اپنے بیان میں گزشتہ دنوں ملک کے بعض حصوں میں عصمت دری کے بعد قتل کے انسانیت سوز واقعات پر بھی گہری تشویش کا اظہار کیا ہے اور عوام و خواص سے اپیل کی ہے کہ وہ اس حوالے سے اپنے اندر احساس ذمہ داری و جذبہ خود احتسابی پیدا کریں۔ اس کے بعد ہی اس طرح کے شرمناک واقعات پر قابوں پا یا جاسکتا ہی۔
نیز انہوں نے اس سلسلہ میں حکومتوں سے موثر کارروائی کی اپیل کرتے ہوئے کہا ہے کہ مجرمین کو قرار واقعی سزا دیں ، سماج کے اس ناسور کو بیخ و بن سے اکھاڑ پھیکنے کے لیے اخلاقی و منصبی ذمہ داری ادا رکریں اور اس مرض اور ظلم کے اسباب کو مٹانے کے لیے مناسب اقدام کریں کیوں کہ صورتِ حال دن بدن بگڑتی جارہی ہے اور ہر دوسرا واقعہ پہلے سے سنگین ترین ہوتا جارہا ہی۔

دہلی،۱۲مئی۔مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کے ناظم عمومی مولانا اصغرعلی امام مہدی سلفی کی ایک پریس ریلیز کے مطابق جماعت اہل حدیث کے معروف عالم دین اوربے باک خطیب، مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کے ناظم شعبۂ تنظیم اور صوبائی جمعیت اہل حدیث مغربی یوپی کے ناظم جناب مولاناہارون سنابلی کی والدہ محترمہ کا آج میرٹھ میں دوپہردوبجے بعمراکہترسال انتقال ہوگیا ۔انا للہ وانا الیہ راجعون۔
ایک ماہ قبل ان کے کولہے کی ہڈی ٹوٹ گئی تھی جس کا کامیاب آپریشن ہواتھا اوراس کے بعد رو بہ صحت تھیںلیکن کمزوری بدستور رہی پھر اچانک طبیعت بگڑی اورمولائے حقیقی سے جا ملیں۔آپ بڑی ہی دیندار خاتون تھیںاور اولاد کی دینی خطوط پر بہترین تربیت کی۔ ان کی حسن تربیت ہی کا نتیجہ تھا کہ جماعت کو ایک مخلص عالم دین اورشعلہ بیاں خطیب اوربہترین منتظم ملا ۔ان کی دینی خدمات ان کے لئے صدقہ جاریہ ہونگی ۔ان شاء اللہ
ناظم عمومی نے اپنے اخباری بیان میں ان کے پسماندگان ومتعلقین نیزجملہ سوگواران سے اظہار تعزیت کیا۔ نماز جنازہ بعد نماز مغرب ادا کی جائے گی اورشہر کے قبرستان میں تدفین ہوگی

دہلی :۳مئی ۴۱۰۲ء
مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کے ناظم عمومی مولانا اصغرعلی امام مہدی سلفی نے اخبار کے نام جاری ایک بیان میں آسام میںبوڈو شدت پسندوں کے ذریعہ مسلم آبادی پر حملہ اور اس میں تقریبا ۶۲ افراد کی ہلاکت کی پرزور مذمت کی ہے اور اسے نہایت غیر انسانی عمل قرار دیا۔
انہوں نے کہا کہ آسام میں وقتا فوقتا ایک مخصوص فرقے کے خلاف بوڈو انتہا پسندوں کے ذریعہ جان لیوا حملے ہوتے رہتے ہیں لیکن حکومت اس مسئلہ کا پائیدار حل نہیں نکالتی۔
ناظم عمومی نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ بوڈو انتہا پسندوں کے خلاف سخت کارروائی کی جائے اور غیر بوڈو اور اقلیتی فرقہ کے لوگوں کے جان و مال اور عزت و آبرو کے تحفظ کو یقینی بنایا جائے ۔
مولانا اصغر علی امام مہدی سلفی نے اپنے بیان میں گذشتہ دنوں چنئی ریلوے اسٹیشن پر ہوئے دھماکے کی بھی مذمت کی ہی۔ اور اسے بزدلانہ عمل قرار دیا


مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کے ناظم عمومی مولانا اصغر علی امام مہدی سلفی کا تعزیتی پیغام
دہلی :۳مئی ۴۱۰۲ء
مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کے ناظم عمومی مولانا اصغرعلی امام مہدی سلفی نے اخبار کے نام جاری ایک بیان میںمعروف عالم دین اور درجنوں کتابوں کے مصنف اور کیرالا میں مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کی صوبائی یونٹ ندوۃ المجاہدین کیرالا کے ناظم اعلیٰ مولانا عبدالقادر زین الدین الفاروقی کے سانحہ انتقال پر گہرے رنج و افسوس کا اظہار کیا اور اسے ملک و ملت ، جماعت اور انسانیت کا بڑا خسارہ قرار دیا ہی۔
انہوں نے کہا کہ مولانا عبدالقادر زین الدین الفاروقی کو اللہ تعالیٰ نے بڑی خوبیوں سے نوازا تھا اور وہ ملک وملت ، جماعت اور انسانیت کی خدمت کے حوالے سے ہمیشہ کوساں رہتے ہیں ۔ آج صبح مختصر علالت کے بعد بعمر بیاسی (2) سال ان کا انتقال ہوگیا۔ اور شام پانچ بجے ان کی تدفین عمل میں آئی۔
موصوف ندوۃ المجاہدین کیرالا کے ۱۷۹۱ء میں نائب ناظم بنائے گئے اور اس عہدے پر بائیس سال تک فائز رہے بعد آزاں ۳۹۹۱ء میں ندوۃ المجاہدین کیرالا کے جنر ل سکریٹری منتخب ہوئے اور تادم واپسیں اس منصب پر بر قرار رہی۔ آپ کو ملیالم کے علاوہ اردو ، عربی ، انگریزی زبانوں میںمہارت حاصل تھی۔ آپ نے درجنوںکتابیں ملیالم زبان میں تصنیف فرمائیں۔آپ ندوۃ المجاہدین کیرالا کے اعلیٰ تعلیمی ادارے جامعہ ندویہ کے مینجنگ ٹرسٹی اور جامعہ سلفیہ کیرالا کے وائس چانسلر بھی تھی۔
پسماندگان میںدو بیٹے اور چار لڑکیاں اور اہلیہ ہیں۔ پریس ریلیز کے مطابق مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کے امیر حافظ محمد یحییٰ دہلوی، ناظم مالیات الحاج وکیل پرویز، نائب امراء، نائب نظماء و دیگر ذمہ داران و کارکنان نے بھی مولانا عبدالقادر مولوی کے انتقال پر رنج و افسوس کا اظہار کیا ہے اور دعا گو ہیں کہ بار الہ ان کی مغفرت فرما، ان کی خدمات قبول فرما، ان کو جنت الفردوس میں اعلیٰ مقام عطا فرما اور پسماندگان کو صبر جمیل کی توفیق ارزانی فرما۔

دہلی:۱۱/جنوری ۴۱۰۲ء
صوبائی جمعیت اہل حدیث دہلی کے امیر مولانا عبدالستار سلفی نے اخبار ی ایک بیان میں اطلاع دی ہے کہ عالم اسلام کے معروف اسکالر، باکمال داعی اوربے مثال خطیب حضرت مولانا ظفرالحسن مدنی حفظہ اللہ وتولاہ صوبائی جمعیت اہل حدیث دہلی کی دعوت پرشارجہ سے کل مورخہ ۲۱جنوری ۴۰۱۲ء بروزاتوار ۳بجے دن کی فلائٹ سے دہلی تشریف لارہے ہیں ۔جوکل ہی بعدنماز عشاء شہزادہ باغ اندرلوک مسجداہل حدیث عبدالرحمن مان والی میں خطاب عام فرمائیںگی۔ان شاء اللہ۔
پریس ریلیز کے مطابق اس خطاب عام کااہتمام صوبائی جمعیت اہل حدیث دہلی نے کیاہی۔ خطاب کے بعد سوال وجواب کی مجلس منعقد کی جائے گی۔جس میں قرآن وحدیث کی روشنی میں حاضرین کے استفسار کا جواب دیا جائے گا۔واضح رہے کہ صوبائی جمعیت اہل حدیث دہلی کے ذریعہ مرکزی جمعیت اہل حدیث ہندکی نگرانی میں صوبے کے اندر دعوت واصلاح کاعمل بحمد اللہ جاری ہے اوریہ پروگرام اسی اصلاحی ودعوتی سلسلے کی ایک اہم کڑی ہے

دہلی:۷۱/جنوری ۴۱۰۲ء
مرکزی جمعیت اہل حدیث ہندسے جاری اخباری بیان کے مطابق آج مورخہ ۷۱جنوری ۴۱۰۲ء کو مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کے ہیڈ کوارٹر س اہل حدیث منزل جامع مسجد دہلی میں تیسویں دوروزہ آل انڈیا اہل حدیث کانفرنس بعنوان: ’’ اسلامی اعتدالـ امن عالم اور فلاح انسانیت کا ضامن ‘‘ کے سلسلے میں مجلس اداری وانتظامی کی ایک اہم میٹنگ زیر صدارت مولانا اصغرعلی امام مہدی سلفی ناظم عمومی مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند منعقدہوئی ۔ جس میں کانفرنس سے متعلق اب تک کی تیاریوں کا جائزہ لیا گیا اورآئندہ کے لئے لائحہ عمل تیار کیاگیا۔اس میٹنگ میں صوبائی جمعیت اہل حدیث دہلی کے امیر مولانا عبدالستارسلفی، اور صوبائی جمعیت اہل حدیث مغربی یوپی کے علاوہ دہلی ،مغربی یوپی وغیرہ کی اہم شخصیات مثلا الحاج قمرالدین وحافظ محمد عمروغیرہ بھی شریک ہوئیں۔ ان حضرات نے بتایا کہ کانفرنس کے سلسلے میں ملک کے اند رکافی جوش وجذبہ پایا جارہا ہے ۔ان شاء اللہ آئندہ یکم ودومارچ ۴۱۰۲ء کورام لیلا میدان دہلی میں منعقد ہونے والی یہ کانفرنس جس میں محترم امام حرم مدنی کی شرکت کی قوی امیدہی۔ہراعتبار سے کامیاب ترین ہوگی۔اورملک وملت اورانسانیت کے لیے مفید ترثابت ہوگی

بتیسویں آل اندیا اہل حدیث کانفرنس کی تیاریوںکی پیش رفت پر اظہار اطمینان
نئی دہلی۔۵جنوری۴۱۰۲ ،مرکزی جمعیت اہل حدیث ہندکی پریس ریلیز کے مطابق آج اہل حدیث کمپلیکس،اوکھلا،نئی دہلی میں مجلس عاملہ کی ایک اہم میٹنگ امیرجمعیت محترم حافظ محمدیحيٰ دہلوی صاحب کی صدارت میں منعقد ہوئی جس میں ملک کے بیشتر صوبوں سے آئے اراکین،مدعوئین خصوصی اورصوبائی ذمہ داران نے شرکت کی۔ناظم عمومی اورناظم مالیات نے اپنی رپورٹ پیش کی اور شرکاء نے ان پرمکمل اطمینان کا اظہارکیا۔ میٹنگ میںجمعیت کے تمام شعبوں کی کارکردگی کاجائزہ لیا گیااور آئندہ دعوتی،تعلیمی ، تنظیمی اوررفاہی منصوبوں کوتیزی سے بروئے کارلانے پر غور کیا گیا۔ اجلاس میں بتیسویںآل انڈیااہل حدیث کانفرنس کے انعقادکی تیاریوں کاجائزہ بھی لیاگیااور کانفرنس کی مجلس استقبالیہ کے صدر ڈاکٹر عبدالعزیز عبیداللہ مبارکپوری اورکنوینرڈاکٹر عبداللطیف کندی کے مشورے سے متعلقہ کاموں کی بحسن وخوبی انجام دہی کے لئے مزیدکمیٹیوںکی تشکیل اورانہیںاورزیادہ فعال بنانے پر زوردیاگیا۔اس موقعہ پرتقریبا تمام صوبائی جمعیتوں اور متعدد اشخاص نے کانفرنس کے لئے گراں قدر چندے کی پیش کش کی۔ میٹنگ میں مظفرنگر کے فسادات کے متاثرین کی ریلیف وبازآبادکاری کے لئے جماعت کی طرف سے کئے گئے اقدامات پربھی اظہاراطمینان کیا گیا ۔
پریس ریلیزکے مطابق میٹنگ میںحالات حاضرہ کے تناظرمیںعالمی، ملکی وملی مسائل بھی زیرغور رہے اور ان سے متعلق تجاویز وقرار داد منظور کی گئیں۔مجلس عاملہ کی قرارداد میںمملکت سعودی عرب کے خلاف منفی پروپیگنڈہ کرنے والوں کی مذمت اور مسلمانوں کی فلاح وترقی کے لئے کمیشنوں کی سفارشات کے نفاذ کا مطالبہ نیزہم جنسی کو سپریم کورٹ کے ذریعہ جرم قرار دینے کا خیرمقدم اورتمام سیاسی پارٹیوں اور سوسائٹیوں سے اس بابت تعاون کی اپیل کی گئی ہے ۔قرار داد میں دہلی کی نئی سرکار کی بہتر پیش رفت پر بھی اظہار اطمینان کیاگیا۔
قرارداد میں کہاگیاہے کہ مسلم تنظیمیں وافراد ایک دوسرے پر طعن وتشنیع سے گریز کریں اور حکومت ہند سے مطالبہ کیاگیاہے کہ عربی وفارسی کو یوپی ایس سی کے امتحان میں اختیاری مضمون کی حیثیت سے شامل کرے علاوہ ازیں فرقہ وارانہ فساد بل کے نہ پاس ہونے پر اورفسادات زدگان کی بازآباد کاری میں لاپرواہی پر تشویش کا اظہار کیاگیاہے ۔اجلاس میں اس بات کا بھی اعادہ کیاگیاکہ مرکزی جمعیت اہل حدیث ہندپوری طرح متحد ہے اوراس کے ذمہ داران کو پوری جمعیت کا مکمل اعتماد حاصل ہے ،بعض لوگ جو اصلاح کے نام پر انتشار پھیلانے کی کوششیں کررہے ہیں ان کی تگ و دو لائق مذمت ہے لہٰذاجماعت کو اس سے ہوشیار رہنے کی ضرورت ہی۔
مجلس عاملہ نے بٹلہ ہاؤس انکاؤنٹر کی تحقیقات کے مطالبہ کا اعادہ ،جیلوں میں بند مسلم نوجوانوں کی ضمانت پر رہائی اورباعزت بری ہونے والے مسلم نوجوانوں کے نقصان کی تلافی کا پرزور مطالبہ کیاگیاہی۔ بے روزگاری ،بدعنوانی،شام میں ظلم وبربریت اور عالمی طاقتوں کی بے حسی پر تشویش اور انگولا میں اسلام پر پابندی کو عالمی قانون کی خلاف ورزی قرار دیا گیا ہی۔ قرارداد میں دہلی میں رائے دہندگان کی جرأتمندانہ رائے دہی کو جمہوریت اور عوام کی فتح قراردیا گیا ہے اور جماعت اہل حدیث کے نامور عالم دین مولانا عبدالسلام رحمانی،استاذ جامعہ سراج العلوم جھنڈانگر مولاناعبدالمجید مدنی اورصوبائی جمعیت اہل حدیث ہریانہ کے نائب امیرمولاناابراہیم کے انتقال کو جماعت کا ناقابل تلافی نقصان قراردیتے ہوئے پسماندگان سے اظہار تعزیت کیا گیا ہی۔
جاری کردہ
مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند


مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کے زیر اہتمام چودھواں آل انڈیا مسابقہ حفظ و تجوید و تفسیر قرآن کریم بحسن و خوبی اختتام پذیر
اختتامی اجلاس میں ذمہ داران مرکزی و صوبائی جمعیات اہل حدیث ، علماء اور دانشوران کے خطابات
چھ زمروں میں پوزشن حاصل کرنے والے طلبہ کو انعامات سے نوازا گیا
نئی دہلی: ۵۲/نومبر ۳۱۰۲ء
= حق اہل حق کے زندہ رہنے سے ہی زندہ رہتا ہی۔ جس سر زمین سے اہل حق ناپید ہوجاتے ہیں تو وہاں سے حق بھی ناپید ہوجاتا ہی۔ اندلس کی مثال ہمارے سامنے ہی۔ اس لیے اہل حق کو زندگی کے اسباب اختیار کرنا چاہئے اور وہ اسباب ہیں انسانوں کے پروردگار کے فرمان قرآن کریم اور رسول رحمت عالم صلی اللہ علیہ وسلم کی پیاری سنتوں کی اطاعت و پیروی ۔قرآن کریم انسانیت کے فوزوفلاح کے لئے اللہ تعالیٰ کا آخری پیغام ،قرآن کریم تحفظ حقوق انسانیت کا سب سے بڑا داعی ، امن عالم کا سب سے بڑا پیامبر، اخوت و بھائی چارہ کا سب سے بڑا نقیب،زندگی کے ہر معاملے میں اعتدال و میانہ روی کا سب سے بڑا پرچارک، خیرو سعادت کا سب سے بڑا ترجمان، تشدد و منافرت اور ظلم واستحصال کا سب سے بڑا مخالف اور عدل و انصاف کا سب سے بڑا نگہبان ہی۔ رہتی دنیا تک انسانیت اس سے فیضاب ہو کر سر خرو و کامران ہوتی رہے گی۔قرآن کریم دہشت گردی کو سب سے بڑاجرم اورایک انسان کے قتل کوساری انسانیت کے قتل کے مترادف قراردیتاہی۔ ان خیالات کا اظہار مولانا اصغر علی امام مہدی سلفی نے کیا۔ موصوف کل مورخہ ۴۲/ نومبر ۳۱۰۲ء کو مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کے زیر اہتمام اور صوبائی جمعیت اہل حدیث راجستھان کے زیر انتظام چودھواں دوروزہ آل انڈیا مسابقہ حفظ و تجوید و تفسیر قرآن کریم کے اختتامی اجلاس منعقدہ دار العلوم اہل حدیث جودھپور میں کلیدی خطاب فرما رہے تھی۔

 
دہلی: ۲۲/نومبر ۳۱۰۲ء
انسانیت کے نام اللہ رب العزت کے آخری پیغام، سرچشمہ رشد و ہدایت اور امن و فلاح کا ضامن قرآن کریم کی تعلیمات کو عام کرنے ، معاشرہ کو خیر پسند اور بہی خواہ انسانیت بنانے اور اسے قرآنی تعلیمات پر عمل پیرا کرنی، نئی نسل کے اندر فہم و تدبر قرآن کے ذوق کو فروغ دینے اور جذبہ مسابقت پیدا کرنے کے پیش نظر مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کے زیر اہتمام اور صوبائی جمعیت اہل حدیث راجستھان کے زیر انتظام چودھواں دوروزہ آل انڈیا مسابقہ حفظ و تجوید و تفسیر قرآن کریم کا حسن آغاز کل مورخہ ۳۲/نومبر ۳۱۰۲ء کو دار العلوم اہل حدیث جودھپور میں صبح نو بجے سے ہوگا اور یہ مسابقہ ۴۲/نومبر ۳۱۰۲ء تک جاری رہے گا۔ اس سلسلہ کی ساری کارروائیاں مکمل ہوچکی ہیں اور ملک کے مختلف حصوں سے شرکائے مسابقہ کی آمد کا سلسلہ بھی شروع ہوچکا ہی۔ صوبائی جمعیت اہل حدیث راجستھان کے امیر جناب عبدالرحمن خلجی اور ناظم جناب عبدالحفیظ صاحب اور دیگر ذمہ داران نے حکم صاحبان ، شرکاء طلبہ اور مہمانوںکے استقبال اور قیام و طعام کا بہترین نظم کیا ہی۔ ان باتوں کی جانکاری مولانا اصغر علی امام مہدی سلفی ناظم عمومی مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند نے اخبار کے نام جاری ایک بیان میں دی۔
انہوں نے کہا کہ مسابقہ کے اختتام پر ۴۲/نومبر ۳۱۰۲ء کو پروقار اختتامی اجلاس منعقد ہوگا جس میں مسابقہ کے چھ زمروں میں نمایاں مقام حاصل کرنے والے طلبہ کے مظاہرہ قراء ت کے ساتھ ساتھ موقر علماء و ملی تنظیموں کے ذمہ داران کے عظمت قرآن و حاملین قرآن اور تعمیر ملک و ملت اور انسانیت میں قرآن کے کردار پر روشنی ڈالیں گی۔ اس اجلاس میں پوزیشن حاصل کرنے والے طلبہ کو گراں قدر انعامات ، ہدائے اور توصیفی اسناد دی جائیں گی۔ ا سی طرح تمام شرکاء کو توصیفی اسناد اور
ہدیے پیش کئے جائیں گی۔

Page 3 of 7

The Collective Fatwa against Daish and those of its ilk