شہزادہ سلمان بن عبدالعزیز آل سعود کو مملکت سعودی عرب کا فرمانروا بنائے جانے پر

مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کے ناظم عمومی مولانا اصغر علی امام مہدی سلفی کی دلی مبارک باد
دہلی:۴۲/ جنوری ۵۱۰۲ء
مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کے ناظم عمومی مولانا اصغر علی امام مہدی سلفی نے اخبار کے نام جاری ایک بیان میںمملکت سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ سلمان بن عبدالعزیز آل سعود کو مملکت سعودی عرب کا نیافرمانروا اور خادم الحرمین الشریفین بنائے جانے پر دلی مبارک باد پیش کی ہے اور توقع ظاہر کی ہے کہ شاہ عبداللہ بن عبدالعزیز آل سعود رحمہ اللہ کے بعد مملکت سعودی عرب ان کی قیادت میں مبنی بر کتاب وسنت منہج پر گامزن رہتے ہوئے اور مملکت کی دینی و ملی اورانسانی بنیادوں کو برئوے کار لاتے ہوئے مزید ترقیات و امکانیات سے ہمکنار ہوگی۔ اللہ تعالیٰ ان کی فکر رسا اور با بصیرت قیادت کو مملکت سعودی عرب، عرب دنیا، عالم اسلام اور پوری انسانیت کے لیے مزید ترقی، خوشحالی اور امن وسکون کا باعث بنائی۔ آمین
ناظم عمومی نے کہا کہ ۹۷ سالہ نئے خادم الحرمین الشریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز آل سعود تقریبا ۶ دہائیوں سے حکومت کے مختلف عہدوں پر فائز ہوکر ملک و عوام کی خدمت کر رہے ہیں ، رموز مملکت سے بخوبی واقف ہیں ، امور سلطنت کا کافی تجربہ رکھتے ہیں ۔ سعودی علماء و عوام کے دینی و عربی احساسات و جذبات کے قدرداں ہیں۔ ان کو عالمی سیاست کاپورا ادراک ہی۔ اپنے پیش رو شاہ عبداللہ بن عبدالعزیز آل سعود کے دست راست رہے ہیں ، عملا ایک مدت سے امور مملکت کو انجام دے رہے ہیں اور شاہی خاندان کے آپسی معاملات اور ان کی اخلاقی وتربیتی نشو ونما کے سب سے بڑے مربی تسلیم کیے جاتے ہیں۔ حرمین شریفین و دیگر مشاعر حج کی توسیع اور تعلیمی، سماجی، معاشی و سیاسی اصلاحات ، امن مساعی و بین مذاہب مذاکرات کے انعقاد میں ان کا بھی بہت رول رہا ہی۔
ناظم عمومی نے اپنے بیان میں خادم الحرمین الشریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز آل سعود کے ذریعہ شہزادہ مقرن بن عبدالعزیز آل سعود کو ولی عہد اور شہزادہ محمد بن نائف بن عبدالعزیز آل سعود کو ولی عہد ثانی بنائے جانے پر بھی خادم الحرمین الشریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز آل سعود، شہزادہ مقرن بن عبدالعزیز آل سعود، شہزداہ محمد بن نائف بن عبدالعزیز آل سعود، وزیر اسلامی امور، اوقاف ، دعوت وارشاد وڈاکٹر سلیمان اباالخیل، معزز شاہی خاندان، علمائے مملکت و عوام کو قلبی مبارک باد پیش کی ہی۔
ناظم عمومی نے مزید کہا کہ نئے ولی عہد شہزادہ مقرن بن عبدالعزیز آل سعود اور ولی عہد ثانی شہزادہ محمد بن نائف بن عبدالعزیز آل سعود کو سابق ولی عہد اور نئے فرمانروائے مملکت شاہ سلمان عبدالعزیز آل سعود کا اعتماد حاصل رہا ہی۔ ولی عہد شہزادہ مقرن بن عبدالعزیزکو تدبیر مملکت کا بڑا تجربہ ہی۔ اسی طرح امیر نائف بن عبدالعزیز آل سعود جو حکومت ِ سعودی عرب کے دل و دماغ کہے جاتے تھے اور جو داخلی امو ر کے بڑے رمز شناس تھے شہزادہ محمد بن نائف ولی عہد ثانی ان کے چشم وچراغ ہیں اور انہوں نے دور اندیشی اور امور مملکت میں مہارت اپنے والد سے پائی ہی۔ملک کے اندر امن وشانتی کے قیام میں ان کا اہم رول رہا ہی۔

The Collective Fatwa against Daish and those of its ilk

ہمارے رسائل وجرائد

http://ahlehadees.org/modules/mod_image_show_gk4/cache/al-isteqamah2gk-is-214.jpglink
http://ahlehadees.org/modules/mod_image_show_gk4/cache/islahe-samaj2gk-is-214.jpglink
http://ahlehadees.org/modules/mod_image_show_gk4/cache/jareeda-tarjumah2gk-is-214.jpglink
http://ahlehadees.org/modules/mod_image_show_gk4/cache/the-symple-truth2gk-is-214.jpglink
«
»
Loading…